Saturday, January 24, 2015

سچ اور آئینہ

لوگ سچ سننا پسند نہیں کرتے اس کی ایک وجہ یہ بھی ھے ۔ سچ بے لباس ھوتا ھے برہنہ سامنے  آ کھڑا ھوتا ھے اپنے کوڑھ ذدہ وجود کے ساتھ اپنے تلخ چہرے کے ساتھ جو ھم برداشت نہیں کر پاتے 





جھوٹ ھزار پردوں میں میں چھپا رہتا ھے ۔یا بہت ھی   حسین اور  دلکش لباس ملبوس کیے ھوتا ھے ۔ جو ھمیں دیکھنے سننے میں اچھا لگتا ھے ۔ ھم خوبصورت  پردوں میں چھپا مکروہ چہرہ دیکھ نہیں پاتے ۔۔۔ جب جھوٹ کے پردے ھٹتے ھیں ۔۔ ھمارے سامنے سچ بن کر آتا ھے تو ۔۔ ھمیں برا لگتا ھےھمارے لیے نا قابلِ برداشت ھوتا ھے  ھم  اس سے  نفرت کرنے لگتے  ھیں 








ھر انسان خود کو آئینے میں دیکھتا ھے ۔۔ خود کو سنوارتا ھے ۔۔ سجتا ھے ۔۔۔ اپنی خوبصورتی پر نظر رکھتا ھے ۔۔ اور خوش ھوتا ھے 
مگر جب کوئ ھمیں آئینہ دیکھاتا ھے ۔۔تو ھمیں برا لگتا ھے  اس لیے نہیں کہ آئینہ بد صورت ھوتا ھے   اس میں نظر آنے والا    عکس بھیانک نظر آتا ھے تو ھم چیخنے چلانے لگتے ھیں ۔۔۔ قصور آئینہ دیکھانے والے کا نہیں ھوتا ۔۔۔ ھمارے چہرے کا ھوتا ھے ۔۔۔کچھ لوگ  جھوٹ سننا پسند کرتے ھیں ۔۔۔ اپنے وجود سے وابستہ کوئ بھی کمزوری  نہ دیکھتے ھیں نہ دیکھنا پسند کرتے ھیں ۔وہ یہ نہیں سوچتے ۔ اس کمزوری اس خامی کو دور کر دیں  تو پھرآئینے میں   عکس  خوبصورت    دیکھے  گا   ۔۔۔ مگر شرط یہ ھے پہلے آپ سچ کا سامنا کریں ۔ اور حقیقت کو مانیں --