Wednesday, May 18, 2011

لازوال سستی کا علاج




ھو سکلتا ھے آپ عنوان دیکھ کر سوچ رھے ھوں میں نے پیری فقیری کا کام شروع کر دیا ھے میں کوئ کوئ چلہ کاٹنے کا مشورہ دوں گی کوئ جادو ٹونہ جس کے اثر سے جیسا کہ  دعوے کیے جاتے ھیں پندرہ  دن میں محبوب آپ کے قدموں میں پتھر دل محبوب موم بن جائے ٹائپ کا کوئ ٹوٹکہ جس سے سستی دور ھو جائے گی تو ایسا با لکل نہیں 

اب شاید آپ سوچ رھے ھوں میں نے حکمت شروع کر دی ھے حکیم لقمان کا کوئ نسخہ میرے ھاتھ لگ گیا ھے تو یہ بھی نہیں 
یا کسی پیر بابا کی کرامت سے کوئ ایسا تعویذ مل گیا ھے جس کے باندھنے سے سست اور کاھل انسان سپر مین بن سکتا ھے تو یہ بھی غلط ھے 


کافی عرصے سے سستی طاری تھی بلاگ لکھنے کو بھی دل نہیں کر کررھا تھا دل کرتا تھا بس بیٹھے رھیں تصورِ جاناں لیے ھوئے ۔۔۔۔۔ مگر افسوس کوئ جاناں بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ عجیب سا عالم رھا کیا کچھ بھی نہیں بس فرصت ھی فرصت تھی مگر مصروف 
بہت رھے ۔۔۔۔۔ واقعی جس نے بھی کہا ھے ٹھیک کہا ھے جو کچھ نہیں کرتے وہ کمال کرتے ھیں 


کچھ لوگوں نے خاموشی سے سمجھا شاید ھم دنیا فانی سے کوچ کر گئے کسی نے سکون کا سانس لیا کچھ نے فاتحہ پڑھ دی کچھ نے حیرت کا اظہار کیا کہ دنیا سے اچھے لوگ جلد گزر جاتے ھیں ھم کس خوشی میں دنیا سے چلے گئے تصدیق کے لیے فون کیا ھم نے ھی اٹھایا تو انھوں نے خوشی سے کہا وہی تو میں حیران تھی اچھے لوگ دنیا سے جاتے ھیں مجھے یقین تھا تم خیریت سے ھو گی ۔۔۔۔۔ اب ایسے میں کوئ کیا کہہ سکتا ھے 


دنیا کے لوگ بھی عجیب ھیں کچھ دوست نما دشمن ھوتے ھیں کچھ دشمن نما دوست ھوتے ھیں ۔۔۔۔۔۔۔ خیر دنیا کے رنگ نرالے 
جتنے چہرے اتنے رنگ ۔۔۔۔۔ اور کچھ بد رنگ ۔۔ اور کچھ رنگ میں بھنگ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


بات جہاں سے شروع ھوئ تھی وہ وہی پہ رک گئ سستی کا کیا علاج ھے ۔۔۔۔ وھم کا تو سنا تھا وھم کا علاج حکیم لقمان کے پاس بھی نہیں تھا ۔۔۔ مگر ھر حکیم ۔۔ حکیم لقمان نہیں ھوتا اس لیے وھم کا علاج بھی ممکن ھے یہ میرا وھم ھے ۔۔۔۔۔۔  مگر سستی کا علاج کس کے پاس ھے 
وہ بھی لازوال سستی کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس سستی کے ھاتھوں بہت تنگ ھیں اگر سست نہ ھوتے تو شاید کچھ ھوتے -------
میں ایک رائٹر کی بائیو گرافی پڑھ رھی تھی اتنی عمر نہیں جتنی کتب وہ تحریر کر چکے ھیں اگر پیدا ھوتے ھی کتاب لکھی ھو تو بھی عمر کے سال سے کتب کی تعداد  زیادہ بنتی ھیں 
نجانے کیسے لوگ ھیں کچھ لوگوں کو دیکھ کر سوچتی ھوں یہ ایک دن میں اتنے کام کیسے کر لیتے ھیں دن تو ان کا بھی چوبیس گھنٹے کا ھوتا ھے ۔۔ کھانا پینا ۔۔ ملنا ملانا ۔۔ سونا جاگنا ۔۔ فون ٹی وی کمپیوٹر ۔۔۔۔ ھزار کام ۔۔۔۔ لوگ کیسے تقسیم کرتے ھیں اپنے وقت کو ۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ لوگوں کے لیے شاید وقت ٹھہر جاتا ھے  یا وہ وقت کی رفتار سے تیز بھاگتے ھیں ۔۔۔۔ کچھ لوگ وقت سے بہت پیچھے رہ جاتے ھیں اور وقت انھیں چھوڑ کر بہت آگے نکل  جاتا ھے ۔۔ اور پھر وقت کبھی ھاتھ نہیں آتا ۔۔۔۔۔