Wednesday, June 1, 2011

فراغ دلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔






پریس کانفرنس ھو رھی  تھی مختلف سوالات کیے جا رھے تھے اتنے میں ایک صحافی نے محترم صدر صاحب سے سوال کیا اللہ نے آپ کو اتنا نوازا ھے
اتنا کچھ دیا ھے آپ اللہ کے راہ میں کیا دیتے ھیں


محترم صدر صاحب کے چہرے پہ ازلی مسکراہٹ سجی ھوئ  تھی
انھوں نے مسکراتے ھوئے کہا

میرے پاس اللہ کا دیا اور بندوں سے لیا ھوا بہت کچھ ھے
اور جو کچھ بھی ھے وہ سب اللہ سائیں کا ھی ھے
میرا اپنا تو کچھ بھی نہیں مجھے حیرت ھے آپ نے مجھ سے یہ سوال کیا
میں تو اپنا سب کچھ اللہ کی راہ میں قربان کرنے کے لیے تیار رھتا ھوں
میں تو صبح آنکھ کھولتا ھوں تو شہادت کی آرزو لیے ھوئے کھولتا ھوں
اللہ مجھے جو بھی دیتا ھے میں اس کی راہ میں دے دیتا ھوں

صحافی نے حیرت سے پوچھا
سر آپ نے آج تک کیا کیا اللہ کی راہ میں دیا ھے

دیکھو بابا صدر صاحب نے ایسے مسکراتے ھوئے اسے دیکھا جیسے ایک بزرگ نادان بچے کو دیکھتا ھے
میری جتنی بھی ایک دن کی کمائ ھوتی ھے وہ میں جھولی میں بھر کر آسمان کی طرف اچھال دیتا ھوں
اللہ سائیں نے جو اپنے پاس رکھنا ھوتا ھے وہ رکھ لیتا ھے باقی میری طرف پھینک دیتا ھے



فراغ دلی کی ایسی اعلیٰ مثال ملنا مشکل ھے حاتم تائ بھی پانی پانی ھو رھا ھوگا ایسی دریا دلی پہ


نوٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہاں صدر کا نام نہیں لکھا کیا پتا یہ کسی کمیٹی کے صدر کی کہانی ھے یا کسی کمیشن کے صدر کی آپ اپنی مرضی سے اپنی پسندیدہ شخصیت کا نام  فٹ کر سکتے ھیں یہ آپ کی مرضی پہ ھے دیکھتے ھیں کس کس کی سوچ ملتی ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔