Friday, August 26, 2011

بچپن کا رمضان


وقت کتنی جلدی گزر جاتا ھے ایسے لگتا ھے وقت کو پر لگ گئے ھیں بھاگ نہیں رھا اڑ رھا ھے ابھی لگتا ھے انتظار کر رھے تھے رمضان آنے والا ھے اور آج جمعتہ الوداع بھی گزر گیا

پاکستان میں پتا نہیں اب رمضان کیسا آتا ھوگا جیسا ھم نے گذارا تھا بچپن میں ۔ اب بھی ویسی ھی رونق ھوتی ھوں گی سحری سے پہلے بھی مسجد سے اعلان شروع ھو جاتا تھا سحری جگانے والے بھی آتے تھے پھر سارا دن سب کو اتنے فخر سے بتاتے تھے آج ھمارا روزہ ھے پھر افطاری کا انتظار - بازار میں رونقیں - مزے مزے کی خوشبو ئیں اور کھانے - چاند رات کی رونق عید کا مزا -یہاں پر ھر تہوار خاموشی سے گزرتا ھے نہ قریب کوئ مسجد ھے جہاں مسجدیں ھیں بھی وہاں بھی لاؤڈ سپیکرز استعمال کی اجازت نہیں - بازار ویسے ھی خاموش ھوتے ھیں جیسے سارا سال ھوتے ھیں رمضان کی رونق یہاں کہاں ۔ ہاں ایک فرق ھوتا ھے یہاں کی مارکیٹوں میں کھجوریں مل جاتی ھیں رمضان میں ۔ نہ چاند رات کی رونق ھوتی ھے نہ عید کا پتا

خوشیاں اور غم اپنوں کے ساتھ منانے میں سکون ملتا ھے خوشی میں جب  آپ کے ساتھ آپ کے اپنے خوش ھوتے ھیں تو خوشی دوبالا ھو جاتی ھے اور غم میں جب کوئ آپ کے آنسو صاف کرنے والا ھو تو غم آدھا رہ جاتا ھے

آج پاکستان بہت یاد آرھا ھے یہاں عید پہ باربی کیو بھی ھوگا ملنے والے بھی ھوں گے مگر وہ مزا نہیں  ھوگا جو اپنے سب کے ساتھ مزا آتا تھا اور خوشی ملتی تھی