Wednesday, May 15, 2013

سکون





تیز تیز قدم اٹھاتے ھوئے بھاگتے ھوئے لوگ
 نجانے کس کی تلاش ھے
رزق کی شاید ۔
 مگر کتنا ۔
کتنی خواہشات
مرتے دم تک
ایک کے بعد ایک
مگر سکون
سکون نہیں ملتا
ھم بے سکون کیوں رھتے ھیں
ھم اللہ سے شکایت کرتے ھیں
ھمیں وہ سب کیوں نہیں مل رھا
جس کی ھم خواہش کرتے ھیں
وہ سب جو ھم چاھتے ھیں
ھم کبھی ان سب نعمتوں شکر ادا نہیں کرتے جو ھمیں میسر ھوتی ھیں
شاید اس وجہ سے کہ ان کے لیے روئے نہیں ھوتے
ھم نے محنت نہیں کی ھوتی
بن مانگے ھمیں مل جاتی ھیں
شاید اسی لیے ھم ان کی قدر نہیں کرتے
کسی کی بیماری کی وجہ سے آنکھیں چلی گئ
تو احساس ھوا کتنی بڑی نعمت تھی
ھمارے کان ۔ ھماری آواز ھمارے ھاتھ پاؤں
ھمارے سوچنے سمجھنے کی طاقت
کچھ بھی نہیں مانگا سب بن مانگے ملا
مگر دکھ اس کا ھوتا ھے جو نہیں ملا شاید مل جانے پہ
ھم شکر ادا نہ کرتے اپنا حق سمجھتے
کسی اور خواھش کے پیچھے بھاگنے لگتے
سکون تو دل میں ھوتا ھے
اور ھم بے جان چیزوں میں ڈھونڈتے ھیں
سکون شکر میں ھوتا ھے
اور ھم ناشکرے بن کر
سکون کی تلاش کرتے ھیں
شکر نہ ھو تو محلوں میں بھی سکون نہیں ھوتا
شکر ھو تو کچے گھر والے بھی پر سکون ھوتے ھیں